شوق پرواز

علم   سے   ارزشِ    انسان    ھویدا   ہوجائے

صرف دعوی   ہو   تو   اک  موڑ پہ رسوا ہوجائے

نہیں گرتا ہے کبھی قعر مذلّت میں وہ شخص

نورِ دانش سے نگہ جس کی بھی بینا ہوجائے

رھو     ارباب  حقیقت   سے   سدا   پیوستہ

قطرہ دریا  سے  جو مل جائے تو دریا ہوجائے

متواضع ہو تو  محفل ہی تمہیں  ڈھونڈے گی

اور خودبیں ہو تو محفل میں بھی تنہا ہوجائے

بحر سے گھونٹ بھی بھرنے کا سلیقہ جانو

حیف ہے قلبِ سمندر میں بھی پیاسا ہوجائے

شوق  پرواز   اگر   ہے   تو   اے  شاھین نظر

نقطۂ   اوج   پہ   تیرا   بھی   بسیرا  ہوجائے

سوئے محبوب تجھے لیکے  چلے  وعدۂ دید

قلّۂ   عشق  پہ روشن  جو   ستارا  ہوجائے

درد    سے    درد     کو    آرام   دلانے والے

یہ  ھنر  ہے   تو   ہمارا   بھی  مداوا ہوجائے

وسعتِ  فکر ،  مسیحا کا کرم ہے اطہرؔ

یہ وہاں ہوگی جہاں ان کا اشارا ہوجائے


موضوعات مرتبط: عمومی مطالب

تاريخ : سه شنبه دوازدهم اسفند 1393 | 17:37 | نویسنده : سيد سجاد اطهر موسوي تبتي | 2 نظر Comment


.: Weblog Themes By RoozGozar.com :.