Birth and Imamate



The promised Mahdi, who is usually mentioned by his title of Imam al-Asr

(the Imam of the "Period") and Sahib az-Zaman (the Lord of the Time/Age), is the son
of the eleventh Imam. His name is the same as that of the Holy Prophet. He was born
in Samarrah on the 15th of Shabaan in 255 A.H./868 A.D. and until 260 A.H./872 A.D.
when his father was martyred, lived under his fathers care and guidance. His mother
was Bibi Nargis Khatoon who was the grand daughter of Qaisar al-Rome from the
father’s side and the grand daughter of Janab al-Shamoun who was the successor of
Hazrat Isa (AS)



Sayyida Hakimah who was the sister of the 10th Imam (Imam Ali Naqi (AS)) relates
that she went to her nephews (11th Imam - Imam Hassan Askari (AS)) house for iftaar
in the evening of 14th of Shabaan 255 A.H. The 11th Imam asked her to stay as his
son was to be born soon. There was no sign of pregnancy on Bibi Narjis Khatoon. The
11th Imam asked her to recite Suratul Qadr on Bibi Narjis Khatoon. At the time of
Fajr on 15th Shabaan Sayyida Hakimah heard the Sura being recited from the womb of
Bibi Narjis Khatoon. The 11th imam told her that the birth would occur very soon.
She states that as the time approached, it appeared as if a curtain was raised
between me and Bibi Narigs and after a while when that curtain was removed, I saw a
beautiful baby boy performing sajda (prostration) and proclaiming the oneness of
Allah and the Prophet hood of the Prophet Mohammad (PBUH). According to a report,
on his right shoulder was inscripted “Jaa al-haqqa wa zahqal batil innal batilin
kana zahooqa” (see translation below).



He also recited the 5th aya of Surat al-Qasas "And We intend to bestow (Our) favours
upon those who are weak in the land and make them the Imams (leaders) and make them
the heirs". On his right hand was written the 82nd aya of Suratu Bani Israel "The
truth has come and falsehood has vanished; Indeed falsehood (is a thing by nature)
vanishing". The 11th Imam (AS) arranged to have various animals slaughtered as
aqeeqa and distributed among trusted believers so that there could be many witnesses
of the birth of Imam Mahdi (AS).



One of the women slaves called Naseema relates that when she went to see the baby
Imam in his cradle she greeted him with salaam and was replied to. She then sneezed
and the Imam said: "Yarhamukallah - it is a blessing from Allah and you have 3 days
immunity from death".



The last Imam (AS) was hidden from public view and only a few of the

elite among the Shiahs were able to meet him. After the martyrdom of his father he
became Imam and by Divine Command went into occultation

(ghaybat). Thereafter he appeared only to his deputies (naibeen) and even then only
in exceptional circumstances.



Ghaibat (occultation) of the last Imam (AS)



The Imams ghaibat (occultation) was in two phase - Ghaibat al-Sughra

(minor occultation) was for about 69 years - 260 A.H. (872 A.D.) to 329 A.H. (939
A.D.) and the Ghaibat al-Kubra (greater occultation) started in 329 A.H. (939
A.D.)and will continue until Allah(swt) so wills.



Why Ghebat?of imam mehdi(as)



the 6th Imam, Imam as-Sadiq (AS) states the reason of the ghaibat as prevention
against being killed. Ishaq bin Yaqub (on authority from 12th Imam) says that all
the Imams were under oppressive rulers. Our 12th Imam is hidden in order to rise in
arms with obedience to no one.



Mohammad Yaqub Al-Kulayni has said that ghaibat is a test from Allah to test the
steadfastness of belief in Imam.



If he is to remain in Ghaibat, what is the use of his existence?

Belief creates hope giving strength to the oppressed.

It is a deterrent for the committing of injustice as one is always aware of the
constant presence of the Imam.



What Meean of Ghaibat al-Sughra?



To make the Shias used to approaching scholars instead of Imam himself. It started
during the time of the 10th Imam who was under almost constant house arrest in
Samarra and continuing through.



GHAIBAT AL-SUGHRA (160 A.H. to 329 A.H.)


During Ghaibut-us-Sughra, the Imam (AS) appointed four deputies/representatives to
represent him among the people. After the death of the fourth deputy, the Imam (AS)
went into Ghaibut al-Kubra (major occultation). This was on the 10th Shawal 329 A.H.



The 4 representatives were :



1. Uthman bin Saeed Umravi (AR)

It is said that at the age of 11 years he was a servant in the house of the 9th Imam
later to enjoy the confidence of Imam. He occupied the same position of trust with
the 10th and 11th Imam who told their Shias that after him they would not see the
12th Imam and would have to obey Uthman. After the 11th Imams martyrdom Uthman
moved to Baghdad and disguised as a butter seller he set up the collection of khums
for Imam. He served the 12th Imam for 5 years and received a letter near his death
from Imam (AS) telling him to appoint his son Mohammed as the next representative.



2.
Mohammad bin Uthman bin Saeed Umravi (AR)

He continued in his fathers footsteps also acting as a butter seller. He managed to
keep Imams existence a secret from the Abbasids until the early years of the reign
of Al-Mutadid. The rulers then started searching hard for Imam and killed countless
mumineen with even the slightest resemblance to Imam. Spies were set up to probe
the khums network. Imam issued an order for Shias not to take his name nor show
masala of khums to anyone until absolutely sure of them. As instructed by Imam he
appointed Husayn bin Rawh as the next representative after his death in 305 A.H. He
served the Imam (AS) for 40 years.



3. Husayn bin Rawh (AR)


His kuniyya was Abul Qasim. His sociable nature won him respect even from the
Ahlul-Sunnah. He managed to keep his activities a secret from the rulers whilst
maintaining good relations with them. It is to him that we address the Arizah to be
delivered to Imam. He served faithfully until he died in Shaan 326 a.h. revealing
the appointment of Ali bin Mohammad Samry after him. He served for 21 years.



4. Ali bin Mohammad Samry (AR)

He served for only three years. A week before his death he received a

letter from the Imam (AS) telling him of his forthcoming death and that there would
be no representative after him and that Imam (AS) was now going into
Ghaibat al-Kubra (major occultation). Imam (AS) would then appear when Allah(swt)
wills it. Ali bin Mohammad Samry (AR) died on 15th Shabaan 329 A.H. after serving
for 3 years.



GHAIBAT AL-KUBRA (329 A.H. to present)




Imams ghaibat is described by the Aimma like that of Prophet Yusuf (AS) who was
amongst his brothers yet they did not recognise him.



Imam is known to meet a believer on 3 occasions:



1. At the time of trouble.

2. He is present at every Hajj.

3. He attends the funeral of every believer who has no religious

obligations pending on him/her e.g. Khums.



During this time he continues to guide. Numerous letters have been

received from him by (to quote a few) Ishaq bin Yaqub, Sheikh Mufeed...

It is reported that 30 people all over the world meet with him

regularly.



Responsibilities During Ghaibat al-Kubra



1. Pray for the safety of Imam (AS) at all time.

2. Be in waiting for Imam (AS) at all times.

3. Give Sadaqa for Imam (AS).

4. Pray for his re-appearance.

5. Whenever faced with difficulty (whether small or big) ask for assistance from
Imam (AS).

6. Whenever his name is heard or recited, one should stand if possible, send salaams
on him, put hand on head and bow.

7. If possible perform Hajj/Umra for Imam (AS). (Hajj-After own Wajibat)



Arizah




It is customary among the Muhibban al-Ahle-Bait (AS) to write a letter of
Imam al-Zaman (AS) in the early morning of 15th Shaban. This letter is known as
Arizah and is written with a lot of love and care using safron as ink and wrapping
the letter in pure clay or flour. In the letter, momineen and mominaat present their
salutations and praises to the Imam (AS) and also write their problems and worries.
This wrapped letter is then thrown usually in lakes or river or ocean in the name of
one of his representatives (one of the 4 described above - usually Hussain
ibn al-Roh) recalling the methodology which was in place during the Ghaibat al-Sughra.

It is a strong Shiite belief that the letter reaches the Imam (AS) and he addresses
the worries and problems of his shiites becausse they are resolved in many many
cases. That is the reason why this practice has continued for long period and is
still very emotionally and religiously in practice.


موضوعات مرتبط: موعود وانتظار

تاريخ : یکشنبه دهم خرداد 1394 | 10:40 | نویسنده : سيد سجاد اطهر موسوي تبتي | نظر Comment

پاسخ: آنچه دقيق تر به نظر مي‌رسد اين است كه دعاي شريف عهد چهل صبح پشت سر هم، ما بين الطلوعين(از سپيده صبح كه اول وقت نماز صبح است تا طلوع آفتاب) خوانده شود. بنابراين لازم نيست در طول چهل روز در يك زمان خاص خوانده شود، بلكه از طلوع مخبر صادق(سپيده صبح) تا طلوع خورشيد، انسان مي‌تواند دعا را بخواند. 


موضوعات مرتبط: موعود وانتظار

تاريخ : شنبه بیست و هفتم دی 1393 | 18:1 | نویسنده : سيد سجاد اطهر موسوي تبتي | نظر Comment

سلام بر مهدی ....

 

موعود امت ها، بهار دوران ها ، احیاگر شریعت و قرآن، حیات بخش حقیقت وایمان، یادگار پاکان ووارث رسولان و امامان.


موضوعات مرتبط: موعود وانتظار

تاريخ : شنبه سیزدهم دی 1393 | 22:42 | نویسنده : سيد سجاد اطهر موسوي تبتي | نظر Comment

1۔ موعود منتظر حضرت ولی عصر امام زمان (ارواحنا لتراب مقدمہ الفدائ) اس وقت ظاہر ہوکر بطور آشکار اپنی امامت کے امور کو اجراء فرمائیں گے جب دو مقدّمے (ان کے ظہور کے لئے ) فراہم ہوجائے۔

    پہلا مقدمہ:

    ایسے یاران کی آمادگی جو اس قیام کے مراحل اولیہ کو انجام دینے والے ہوں اور مکمّل طور پر آمادہ وتیّار ہوجائے کہ جب بھی امام علیہ السلام ظہور فرمائے تو فوراً آپ ؑ کے ہمرکاب ہوجائیں اور امام ؑ کے اشارے پر قیام مصلحانہ کا آغاز کرے۔اور دشمنان حق وحقیقت سے مبارزہ کا آغاز کرے۔ اور شمع کے گرد پروانے کی مانند امام علیہ السلام کے اھداف کو تحقق بخشنے کے لئے تادم مرگ محکم قدم اور راسخ عقیدے کے ساتھ ڈھٹے رہے اور کوشش کرے۔

    دوسرا مقدمہ:

    ایسے جامعے کا وجود جس نے اپنے لئے امام علیہ السلام کی ضرورت کا احساس کرچکا ہو اور تمام اصلاح کے نام پر جھوٹے اور بلند بانگ دعوای کرنے والوں کا تجربہ کرچکا ہو اور ہر حوالے سے شکست کی کڑواہٹ کو چکھا ہواور اس کے بعد ظلم وجور اور ظالم وجابر لوگوں سے تنگ آکر حقیقی طور پر حق پرستی کی طرف رخ کرچکا ہو۔

    ظہور امام زمان علیہ السلام کے انتظار کرنے والوں کا اجتماعی وظیفہ ان دومقدّموں کو فراہم کرنا ہے اور بعید نہیں کہ ان مقدمات کے فراہم کرنے کے لئے سعی وتلاش کرنے والوں کے لئے امام علیہ السلام کی مدد اور ھدایت وعنایت شامل حال ہوجائے ۔


موضوعات مرتبط: موعود وانتظار

تاريخ : یکشنبه بیست و نهم اردیبهشت 1392 | 3:8 | نویسنده : سيد سجاد اطهر موسوي تبتي | نظر Comment

    حجّت برحق مہدی موعود (عجل اللہ فرجہ الشریف) کے انتظار کرنے والے دنیا کی ظالم وجابر حکومتوں کے بلند بانگ دعوؤں کو ٹھکرانے والے ہوتے ہیں اور اصلاح کے نام پر مختلف قسم کے فساد پھیلانے والوں کی جھوٹ اور فریب کو سمجھنے والے ہوتے ہیں اور جو لوگ ان کے غلط پروپیگنڈوں سے متاثر ہوچکے ہوں انکو حق وحقیقت کی طرف راہنمائی کرنے والے ہوتے ہیں ۔

    منتظرین واقعی کی ہر وقت یہی کوشش ہوتی ہے کہ امام علیہ السلام کے ظہور کے لئے مقدمہ سازی اور ان کی حکومت کی تشکیل کے لئے اقدام عمل میں لائے۔ لہٰذا وہ لوگ پہلے کسی ایسی حکومت کو تشکیل دینے کی کوشش کرتے ہیں جو کم وبیش عدالت اور سچائی پر مبنی ہو اور اس کے تمام نظام اسی آنے والے حاکم الٰہی کے نظام حکومت سے ملتے جلتے ہوں ، اور یہ لازم نہیں کہ اس حکومت کا نظام صد در صد وہی نظام ہو اور عیوب سے مبرا ہو اور دنیا کو برائیوں سے پاک کرنے والی حکومت ہو کیونکہ صد در صد الٰہی نظام کا قیام اس وقت تک ممکن نہیں جب تک کوئی ایسا ناظم نہ آئے جس کے اندر انسانی اور الٰہی جنبہ دونوں پایا جائے ۔


موضوعات مرتبط: موعود وانتظار

تاريخ : یکشنبه بیست و نهم اردیبهشت 1392 | 3:8 | نویسنده : سيد سجاد اطهر موسوي تبتي | نظر Comment

    رسول گرامی اسلام وہی ناظم برحق ہے جس کے اندر الٰہی اور انسانی دونوں جنبے پائے جاتے ہیں جیسا کہ قرآن پاک میں ارشاد ہے کہ: قل انا بشر مثلکم یوحیٰ الی میرے حبیب کہدو کہ میں تم جیسا انسان ہوں مگر میرے اوپر اللہ تعالیٰ کی جانب سے وحی ہوتی ہے ۔ ساتھ ہی یہ تائید بھی ہے کہ وما ینطق عن الھویٰ ان ھو الا وحی یو حیٰ ہمارے رسول اپنی طرف سے کوئی بات نہیں کرتے اور جو کچھ وہ بولتا ہے وہ وحی الٰہی ہے جو اس پر بھیجی گئی ہے ۔

 

  اب چونکہ نبوت کا سلسلہ ختم ہوا ہے اور وحی کا سلسلہ بھی منقطع ہوا ہے تو یہ کام کیسے ممکن ہے کہ انجام پائے ؟ تو اس سوال کا جواب صرف یہی ہے کہ رسول کی خلافت واقعی کے حقدار وہی افراد ہوسکتے ہیں جن میں رسول کے اندر جو خصوصیا ت ہیں وہ تمام پائی جائے سوائے مقام نبوت وحصول وحی کے ۔ پس رسول نے خود انسانوں کی ہدایت کے لئے ایسے افراد کا نام لے کر قیامت تک آنے والی نسلوں کے لئے اپنے زمانے کے امام کے بارے میں آگاہ فرمایا ہے اور فرمایا ہے کہ انہم منہی وانا منہم یعنی یہ لوگ مجھ سے ہیں اور میں ان سے ہوں ، اسکا مطلب یہ ہے کہ یہ لوگ میرے جیسے ہیں اور میں انکا جیسا ہوں ، میں معصوم ہوں یہ لوگ بھی معصوم ہیں میں نمائندہ الٰہی ہوں اور یہ لوگ بھی اللہ کے نمائندے ہیں میں اللہ کا مقرب ہوں اور یہ لوگ بھی مقربین خدا ہیں ، میرے پاس جو علم ہے وہ انکے پاس بھی ہے اور انکو جن چیزوں کے بارے میں معلومات ہیں وہ میرے پاس بھی ہیں ، یعنی رسول نے خود فرمایا ہے کہ میرے بعد میرے اہلبیت ؑ امت کے ہادی ورہبر ہیں امت کو انکی پیروی کرنا چاہئے چنانچہ آپ نے حجۃ الوداع کے موقع پر غدیر خم میں تمام مسلمانوں ، اصحاب وانصار کے حضو ر میں اللہ تعالٰی کی طرف سے آئی ہوئی وحی کو سب تک پہنچا دیا اور فرمایا من کنت مولاہ فھذا علی مولاہ یعنی جس جس کا میں مولا ہوں اس کا یہ علی مولا ہے ، اور خود امیر المؤمنین علی ابن ابی طالب کو بارہا فرمایا : یا علی انت منی بمنزلۃ ہارون من موسیٰ الا انہ لا نبی بعدی (یہ تمام مسلمانوں کی کتابوں میں موجود ہے )یعنی اے علی ؑ! تمہاری نسبت میرے ساتھ ایسی ہی ہے جیسے ہارون کی نسبت موسیٰ سے تھی مگر یہ کہ میرے بعد کوئی نبی نہیں آئے گا۔ یعنی ختم نبوت کے اعلان کے ساتھ امت کی پیشوائی اور رہبری کی مسؤلیت علی کے ہاتھوں میں سونپ دئے اور انکے بعد یکے بعد دیگرے ان کی اولادوں میں ہوتا ہوا آج یہ مقام خلافت ہمارے زمانے کے امام کے پاس ہے جو ارادہئ الٰہی کے ساتھ لوگوں کی نگاہوں سے غائب ہے اور عنقریب ظہور فرمائیں گے اور دنیا کو عدل وانصاف سے بھر دے گا جیسا کہ وہ ظلم جور سے بھر چکی ہوگی۔


موضوعات مرتبط: موعود وانتظار

تاريخ : یکشنبه بیست و نهم اردیبهشت 1392 | 3:7 | نویسنده : سيد سجاد اطهر موسوي تبتي | نظر Comment

    ہمارا یہ امام ؑ وہی ناظم منصوب من عنداللہ ہے جس کے اندر وحی کو سمجھنے اور حق وباطل کے درمیان تمیز کرنے کی وہی صلاحیت موجود ہے جو رسول خدا میں تھی مگر اینکہ رسول خود صاحب وحی تھے مگر یہ امام مفسّر وحی ہے ۔ اب چونکہ قرآنی حکومت اس وقت اس دنیا میں قائم ہوسکتی ہے جب قرآن سمجھنے والا موجود ہو لٰہیذا جب وہ آئیں گے تو پوری دنیا کو ایک قرآنی اور الٰہی حکومت کے ماتحت قرار دیں گے جس کا ہمیں انتظار ہے۔پس موعود کے انتظار کرنے والے لوگ اپنے عقیدے کو اسی امام کے ساتھ مضبوط رکھ کر اسکے ظہور کے لئے مقدمہ سازی کرنے والے ہونگے ۔

   منتظرین ظہور کو ان مقدمات کی فراہمی کے لئے سعی وتلاش کرنے کے ساتھ ساتھ اس امر کے تحقق کے لئے اسکے کنار میں بشریت کو اپنی تاریخی غلطی (یعنی رسول کی رحلت کے ساتھ ہی حجت خدا سے جدائی ) سے بھی آگاہ کرنا چاہئے اور حجت خدا (عج)پر ایمان نہ لانے کی صورت میں انکا راستہ بند ہونے کے بارے میں بھی آگاہی دینا چاہئے اور یہ بھی انکو بتا دینا چاہئے کہ اگر حجت موعود اسلام پر ایمان نہ لائے تو اس صورت میں تم لوگ کھلی گمراہی اور ایسی تنگ گلی میں ہو جس کا راستہ دونوں طرف سے بند ہے ۔

    منتظرین ظہور کی خصوصیات میں سے ایک دنیا اور اہل دنیا کو اس بات سے بھی آگاہ کرنا ہے کہ:

        جو لوگ جھوٹے نجات دھندوں کے انتظار میں ہیں وہ فقط خیالات شیطانی کی پیروی کر رہے ہیں اور موعود اسلام کے علاوہ دیگر تمام خیالی نجات دھندوں کے بارے میں ہونے والی باتیں شیطانی کار خانے کی بنائی ہوئی باتیں ہیں اور حقیقت سے انکا کوئی تعلق نہیں ۔ حقیقت میں منجی عالم بشریت وہی ہوگا جس کی گواہی تمام آسمانی کتابوں نے دی ہو اور تمام ادیان الٰہی اور کتب آسمانی کا پیغام اسی منجی کا انتظار کرنا ہے جس کو اسلام نے بیان کیا ہے اور قرآن نے گواہی دی ہے ۔

    پوری دنیا کو اس موعود اسلام کی پیروی کی طرف دعوت دینا اور لوگوں کو اسکے اوصاف اور حکومت کی خصوصیات سے آگاہ کرنا بنیا اور اصلی ذمہ داری ہے جب ےک یہ پیغام عام نہیں ہوگا تب تک ایک ایسے جامعے کا ساخت وساز (جو اپنے لئے ایک معصوم امام کی ضرورت کا احساس کرے) ممکن نہیں۔ جب معارف منجی موعود برحق اسکے ظہور اور قیام کے بارے میں لوگوں کو علم ہوگا اور پوری دنیا میں یہ پیغام پھیل جائے گی تو اس وقت ہمیں ایسے جامعے کی تشکیل میں آسانی ہوگی۔


موضوعات مرتبط: موعود وانتظار

تاريخ : یکشنبه بیست و نهم اردیبهشت 1392 | 3:7 | نویسنده : سيد سجاد اطهر موسوي تبتي | نظر Comment

    جب منتظرین واقعی کا ایک جامعہ (سوسائٹی) تشکیل ہوجائے تو اس میں یاران با وفا کا تیار ہونا کوئی مشکل نہیں۔ مثال کے طور پر ہم قیام خمینی بت شکن کو لیتے ہیں جب وہ فرانس اور ترکی میں جلاوطنی کی زندگی گزار رہے تھے اس وقت انہوں نے اپنے دوستوں کے زریعے لوگوں میں یہ پیغام عام کردیا کہ ایک بت شکن جلاوطنی کی مدت طے کرکے واپس آئیں گے تو لوگ شدت سے انتظار کرنے لگے اور ادھر منتظرین واقعی یعنی علماء وصلحاء نے معاشرے میں ایک ایسی فکری فضا قائم کردئے جس میں کسی ایسے شخص کی ضرورت کا احساس ہورہا تھا جو ایران میں موجود ڈھائی ہزار سالہ بت کو منہ کے بل زمین پر دے مارے ۔ جب یہ جامعہ (سوسائٹی ) مکمل طور پر تیار ہوگیا تو لوگ اپنے آپ کو اس جامعے کے اہداف کی تکمیل کے لئے قربان کرنے لگے اور اسی منتظرین واقعی کے کردار اور اس کے بعد امام خمینی رحمۃ اللہ علیہ کے قیام کا اثر تھا کہ لوگ ٹینکوں کے نیچے آنے اور سینے پر گولیاں کھانے کو بھی( ایک حکومت اسلامی کی استحکام کے لئے ) ایک سعادت اور نعمت سمجھتے تھے ، اب جب امام عصر عجل اللہ فرجہ الشریف کے مکتب کے ایک شاگرد کی عظمت اور محبت لوگوں کے دلوں میں اس قدر ہے تو ان لوگوں کے دلوں میں خود امام علیہ السلام کی عظمت کہاں تک ہوگی اور یہ لو اپنے امام علیہ السلام کو کتنے چاہتے ہونگے۔

    خمینی بت شکن (رحمۃ اللہ علیہ)کا اپنے اس قیام اور تشکیل حکومت اسلامی ہدف ومقصد یہی ہے کہ ایک ایسے جامعے کو وجود میں لایا جائے جس میں امام زمان علیہ السلام کے لیے یاران اور فوج تیار کئے جاسکیں۔ اور اس جامعے کی تشکیل زمینہ بن جائے ظہور امام علیہ السلام کے لئے ۔ جیسا کہ خود امام خمینی فرماتے ہیں:

    انقلاب اسلامی کے تین بنیادی مقاصد ہیں :

     پہلا یہ کہ مؤمنوں ، مسلمانوں اور دیگر انسانوں کو ظالم اور طاغوتی حکمران کے پنجے سے چھٹکارا حاصل ہو۔

    دوسرا یہ کہ دنیا میں ایک اسلامی اور الٰہی نظام قائم ہوجائے ۔

    اور تیسرا یہ کہ یہ انقلاب اپنی تمام تر طاقت کے ساتھ انقلاب مہدوی ؑ کے لئے زمینہ ساز بن جائے۔

    اب خمینی بت شکن (رضوان اللہ علیہ) کی اس فکر کو پوری دنیا میں پھیلانا اور تمام انسانوں کے زھنوں کو اس فکر کی روشنی میں امام عصر ارواحنا فداہ کی آمد کے انتظار کے لئے آمادہ کرنا اور لوگوں کو حقیقت کے ساتھ نزدیک لا نا ظہور موعود ؑ کے انتظار کرنے والے حقیقی منتظرین کی مسؤلیت اور زمہ داری ہے ۔

پس ہم میں سے ہر ایک کا وظیفہ ہے کہ دنیا کو حقیقت مھدویت سے آگاہ کرے تاکہ جلد از جلد مقدمات ظہور فراہم ہوجائیں اور امام علیہ السلام کا جہاں تک ہوسکے جلدی ظہور ہوجائے اور دنیا ظلم وجور کی اس تاریک فضا سے نکل کر ایک الٰہی حکومت کے زیر سایہ آجائے۔ بقول اقبال

دنیا کو ہے اس مہدی برحق کی ضرورت

ہو جس  کی نگہ  زلزلہ  عالم  افکار


موضوعات مرتبط: موعود وانتظار

تاريخ : یکشنبه بیست و نهم اردیبهشت 1392 | 3:6 | نویسنده : سيد سجاد اطهر موسوي تبتي | نظر Comment

6۔ اس دنیا میں جتنے بھی غیر منطقی نظریات اور عقائد کے مانّنے والے لوگ ہیں وہ سب اپنے اپنے طور پر اس سعی میں ہے کہ اسلام کی حقیقت وواقعیت سے لوگوں کو دور کرے اور حتی المقدور اپنے عقائد کو تحمیل کرے۔

 علی الاخص صیہونیت اس میدان میں وارد ہوکر اس کوشش میں ہے کہ پوری دنیا کو اپنی حکومت کے ماتحت قرار دے اور اپنے دین کو تمام ادیان پر برتری دلائےاور اپنی قوم کو تمام اقوام عالم کی سرپرستی دلائے۔ جبکہ یہ انکی بھول ہے اور حقیقت سے کوسوں دور ہے ۔

 

            کیونکہ اسلام اور قرآن کا اعلان ہے کہ :

          ھو الذی ارسل رسولہ بالھدی ودین الحق لیظہرہ علی الدین کلہ یعنی اللہ کی زات وہ( پاک اور بابرکت)ہے جس نے اپنے رسول کو ھدایت اور دین حق دیکر بھیجا ہے تاکہ اس دین کو تمام ادیان پر برتری دلائے۔

          اس سے معلوم ہوتا ہے کہ پوری دنیا پر چھاجانے والا دین صرف اور صرف دین اسلام ہے ۔ ایک دین کا دوسرے تمام ادیان پر برتری حاصل ہونے کے لئے الٰہی تعاون کی ضرورت ہوگی اس کے بغیر صرف انسانوں کے عمل سے یہ کام تحقق نہیں پاے گا پس اللہ تعالیٰ اسی دین کے آفاقی ہونے کے لئے مدد کریں گے جس کا اس نے خود وعدہ دیا ہے ۔

             جب قرآن کا یہ اعلان ہوا اور بات یہاں تک آئی کہ پورے عالم پر چھا جانے والا دین صرف اور صرف دین اسلام ہے تو صیہونیسم کے پیروکاروں کے ارادے خاک میں مل گئے اور وہ لوگ چونکہ اسلام کے مخالف ہیں اس لئے سازشیں کرنے لگے کہ اسلام کو کمزور کردیا جائے اور اس موضوع پر سوچ کر وہ لوگ اس نتیجے پر پہنچے کہ جب تک اسلام کا الٰہی اور آسمانی قانون نامہ یعنی قرآن پاک ان مسلمانوں کے درمیان ہے تب تک اسلام کو کمزور نہیں کیا جاسکتا تو انہوں نے جان لیا کہ قرآن کے وجود کے باوجود وہ لوگ اپنے عقائد کو دنیا میں موجود دوسرے ادیان کے پیروکاروں کے عقیدوں پر غلبہ نہیں دلاسکیں گے تو وہ قرآن کے مقابل میں آگئے اور قرآن کو آگ لگا کر یہ ثابت کیا کہ :

۱۔         انہیں اللہ تعالیٰ پر ایمان نہیں اور اسکی طرف سے آئی ہوئی کتابوں کی کوئی اہمیت نہیں۔

۲۔         وہ لوگ پیروکار مسیح کا جھوٹا دعوای کرنے والے ہیں اگر ایسا نہیں تو وہ اس الٰہی کتاب کی بے حرمتی نہیں کرتے جس میں حضرت مسیح کو احترام سے ذکر کیا گیا ہے۔

۳۔         وہ تمام انبیاء الٰہی کے لائے ہوئے نہضتوں کو مخالف ہیں اگر ایسا نہ ہوتا تو قرآن کریم میں موجود ۲۶انبیاء ومرسلین (جن میں سے اکثر بنی اسرائیل سے ہیں )  کے اسماء گرامی کے ساتھ توہیں آمیز رویہ اختیار نہ کرتے ۔

یعنی اس قبیح اور ذلیل فعل (قرآن سوزی)کا مرتکب ہوکر امریکہ واسرائیل (شیطان اور شیطان کے بچے) نے پوری دنیا کو بتا دیا کہ ہمارا تعلق جنسی لذتوں ، غیر اخلاقی قوانین اور ظلم وجور سے ہے اس سے ہٹ کر اللہ تعالی کی طرف سے آئے ہوئے رسولوں اور کتابوں کی پیروی سے ہمارا کوئی تعلق نہیں ۔

             پس اس طرح انہوں نے پوری انسانیت (چاھے دین دار ہو یا غیر دیندار) کے سامنے اسلام کے مقابلے میں اپنی شکست اور پستی کا اعلان واظہار کردیا ہے یعنی انکے اس مذموم کام کے انجام کے بعد پوری دنیا جان گئی ہے کہ امریکہ و اسرائیل اسلام ومسلمانوں کے مقابلے میں شکست کھاگئے ہیں۔

             قرآن کریم کے ساتھ بے احترامی کرنے سے امریکہ کا مقصد یہ تھا کہ اس نور الٰہی کو خاموش کردیا جائے تاکہ دنیا میں انسانوں کے لئے کوئی اخلاقی ،علمی، فرھنگی نظام دینے والی کوئی چیز باقی نہ رہے اور انسانوں کو صراط مستقیم(اسلام)سے منحرف کرنے میں آسانی ہوجائے ۔

             جبکہ وہ لوگ ان باتوں سے غافل تھے کہ اللہ نے اپنے حبیب سے وعدہ دیا ہے کہ یریدون لیطفئوا نوراللہ فافواہہم واللہ متم نورہ یعنی یہ لوگ (کفار ومشرکین)اپنے پھونکوں سے اللہ کے جلائے ہوئے چراغ کو بھجانا چاہتے ہیں حالآنکہ اللہ تعالٰی اپنے نور کو کامل کرکے ہی رہیں گے۔

             دوسری جگہ قرآ ن میں ارشاد ہے کہ : انا نحن نزلنا الذکر وانا لہ لحافظون ہم نے خود اس ذکر(قرآن) کو نازل کیا ہے اور ہم ہی اس کی حفاظت کریں گے ۔

             جس طرح اللہ تعالٰی نے قرآن کی حفاظت کا وعدہ دیا ہے اسی طرح اللہ نے اپنے حبیب کے آخری جانشین جو موعود اسلام ہے یعنی تمام مسلمان اس کے آنے کے انتظار میں ہے اسکو بھی پردۂ غیبت میں دشمنوں کے شر سے محفوظ رکھا ہوا ہے تاکہ وہ ایک دن ظہور کرے اور پوری دنیا میں شریعت محمدی کو نافذ کردے اور قرآن کریم کے تمام احکام کو جاری فرمائے اور تمام ظالم لوگوں کو نابود اور تمام صالح لوگوں کو دنیا میں جینے اور چین سے اللہ کی عبادت بجالانے کاموقع فراہم کرے ۔

چونکہ وعدہ الٰہی کے مطابق بالآخر روئے زمین کا وارث اللہ کے صالح بندے ہونگے جیسا کہ ارشاد ہے ۔

ولقد کتبنا فی الزبور من بعد الذکر ان الارض یرثھا عبادی الصالحون

پس دنیا پر حکومت اسلام ہی کو حاصل ہوگی اور اسلام دشمن لوگوں کے تمام افکار وانظاز وسازشیں ناکام اور بے فائدہ ہے کیونکہ جو بھی اس شمع کے مقابل میں آجائے تو وہ خود جل کرراکھ ہوجاے گا اور اسلام کا یہ چراغ اپنے مراحل و طے کرکے بالآخر پوری دنیا کو اپنی روشنی سے فیضیاب کرے گا۔

 نور حق شمع الٰہی  کو  بجھا  سکتا  ہے  کون ؟

جس کا حامی ہو خدا  اس کو مٹا سکتا ہے کون؟

 آئیں دعا کرتے ہیں کہ ؛ اے اللہ ! اپنے فضل وکرم کو ہمارے لئے جاری رکھ اور اپنی رحمتوں اور برکتوں کو ہمارے اوہر نازل فرما اور اپنے کرم سے تیرے نبی کی آخری جانشین امام مہدی علیہ السلام(جس کا تو نے وعدہ دیا ہے ) کے ظہور میں تعجیل فرما اور مسلمانوں کو کفار ومشرکین کے ظلم وجور سے نجات دلادے ۔ الٰہی آمین

 

                                                                   مشہد مقدس

                                                            سید سجاد اطہر موسوی


موضوعات مرتبط: موعود وانتظار

تاريخ : یکشنبه بیست و نهم اردیبهشت 1392 | 3:5 | نویسنده : سيد سجاد اطهر موسوي تبتي | نظر Comment


.: Weblog Themes By RoozGozar.com :.